Bahlool Sells Paradise

Spread the love

Bahlool Sells Paradise

بہلول نے جنّت بیچی۔


ایک دن بہلول دریا کے کنارے پر بیٹھا تھا اور چونکہ وہ بیکار تھا اس لیے بچوں کی طرح پھولوں کے بستر بنا رہا تھا۔ ہارون رشید کی اہلیہ زبیدہ وہاں سے گزریں۔ بہلول کے قریب پہنچ کر پوچھا: بہلول! تم کیا کر رہے ہو؟”

بہلول نے جواب دیا کہ جنت بنارہا ہوں ۔

“کیا تم اپنے باغات بیچتے ہو؟”

’’ہاں، میں انہیں بیچتا ہوں۔‘‘

“کتنے دینار میں؟”

“ء100 دینار میں۔”

چونکہ زبیدہ بہلول کی ہر ممکن مدد کرنا چاہتی تھی، اس لیے اس نے فوراً اپنی نوکر کو بہلول کو 100 دینار دینے کا حکم دیا، جو اس نے کیا۔

بہلول نے کہا تمہیں رسید نہیں چاہیے؟

’’لکھ کر لے آؤ۔‘‘ یہ کہہ کر زبیدہ اپنی طرف چلی گئی۔

بہلول نے وہ رقم غریبوں میں تقسیم کر دی۔

اس رات خواب میں زبیدہ نے ایک بڑا باغ دیکھا، جیسا کہ اس نے جاگتے ہوئے کبھی نہیں دیکھا تھا۔ اس کے تمام مکانات اور محلات سات منزلہ اونچے اور رنگ برنگے زیورات سے بنے اور بڑے انداز سے آراستہ تھے۔ نہریں بہہ رہی تھیں اور ان کے پاس پھول کھل رہے تھے۔ بہت خوبصورت درخت لگائے گئے، نوکر (لڑکے اور لڑکیاں) سب حاضر تھے اور خدمت کے لیے تیار تھے۔ زبیدہ کو رسید دی گئی جو سونے کی سیاہی سے لکھی ہوئی تھی اور بتایا گیا کہ یہ وہ باغ ہے جو اس نے بہلول سے خریدا تھا۔

جب وہ بیدار ہوئیں تو زبیدہ بہت خوش ہوئیں اور ہارون کو اپنے خواب کے بارے میں بتایا۔ صبح ہوتے ہی ہارون نے بہلول کو لانے کے لیے کسی کو بھیجا۔

جب بہلول آیا تو ہارون نے کہا کہ میں چاہتا ہوں کہ آپ مجھ سے 100 دینار لیں اور اپنا ایک باغ مجھے بیچ دیں جیسا کہ آپ نے زبیدہ کو دیا تھا۔

بہلول نے ایک زوردار قہقہہ لگایا اور کہا کہ زبیدہ نے بغیر دیکھے خرید لیا لیکن تم نے سنا تو خریدنا چاہتے ہو لیکن افسوس کہ میں تمہیں فروخت نہیں کروں گا۔

اسکولوں اور والدین کے لیے ہدایات امتحان دینے والوں کے لیے ہدایات ایڈمٹ کارڈ ڈاؤن لوڈ کریں جماعت ششم میں داخلہ نودئے ودیالیہ 2023 -ابھی اپلائی کریں۔ میرا ایڈمٹ کارڈ کیوں نظر نہیں آ رہا ہے؟
%d bloggers like this: