aakhari mughal shahenshah bahadur shah zafar

Spread the love

بہادر شاہ ظفر یا بہادر شاہ دوم (فارسی: بهادرشاه ظفر) (مرزا ابو ظفر سراج الدین محمد )

(24 اکتوبر 1775 ء – 7 نومبر 1862 ء) بیسویں اور آخری مغل بادشاہ تھا۔

ء28 ستمبر 1837 کو اپنے والد اکبر دوم کی  وفات کے بعد کا تخت نشین ہوئے۔ ظفر( بہادر شاہ ظفر یا بہادر شاہ دوم )کے والد اکبر دوم کو انگریزوں نے قید کردیا تھا اور وہ اپنے جانشین کی حیثیت سے اپنے والد کی ترجیحی انتخاب نہیں تھے۔ اکبر شاہ کی ملکہ ممتاز بیگم نے ان پر دباؤ ڈالا کہ وہ اپنے بیٹے مرزا جہانگیر کو اپنا جانشین قرار دیں۔ تاہم ، ایسٹ انڈیا کمپنی نے جہانگیر کو جلاوطنی کے بعد جب انہوں نے لال قلعے  رہائشی میں ، ان کے رہائشی پر حملہ کیا ، ظفر کے لئے تخت اقتدار سنبھالنے کی راہ ہموار کردی۔

جب بہادر شاہ ظفر تخت نشین  ہو گئے ، مغل حکمرانی کے تحت کا علاقہ بہت کم ہو گیا تھا ، جیسا کہ شہنشاہ کے اختیارات ، علامتی اور دیگر تھے۔ وہ بالآخر صرف ’دہلی کا بادشاہ‘ کے نام سے جانے جاتے تھے

aakhari mughal shahenshah bahadur shah zafar

بہادر شاہ طفر کے منتخب اشعار ؎

لگتا نہیں ہے دل مرا اجڑے دیار میں

کس کی بنی ہے عالم ناپائیدار میں

کہہ دو ان حسرتوں سے کہیں اور جا بسیں

 اتنی جگہ کہاں ہے دل داغدار میں

 کانٹوں کو مت نکال چمن سے او باغباں

یہ بھی گلوں کے ساتھ پلے ہیں بہار میں

 بلبل کو باغباں سے نہ صیاد سے گلہ

 قسمت میں قید لکھی تھی فصل بہار میں

کتنا ہے بد نصیب ظفرؔ

دفن کے لیے دو گز زمین بھی نہ ملی کوئے یار میں ۔

نہ کسی کا آنکھ  کا نور ہوں ، نہ کسی کے دل کا قرار ہوں

جو کسی کے کام نہ آ سکے میں وہ ایک مشت بہار ہوں

میں نہیں ہوں نغمہ جاں فزا ، کوئی سن کے مجھے کریگا کیا

میں بڑے بروگ کی ہوں صدا  ، میں بڑے دکھوں کی پکار ہوں

میرا رنگ روپ بگڑ گیا ، میرا یار مجھ سے بچھڑ گیا

جو چمن خذاں سے اجڑ گیا ، میں اسی کی فصل بہار ہوں

نہ تو میں کسی کا حبیب ہوں ، نہ تو میں کسی کا رقیب ہوں

جو بگڑ گیا وہ نصیب ہوں ، جو اضڑ گیا وہ دیار ہوں

پئے فاتحہ کوئی آئے کیوں ، کوئی چار پھول چڑھائے کیوں

کوئی آکے شمع جلائے کیوں ، میں وہ بیکسی کا مزار ہوں

aakhari mughal shahenshah bahadur shah zafar

پس مرگ میرے مزار پر جو چراغ کسی نے جلا دیا یا

پس مرگ میرے مزار پر جو چراغ کسی نے جلا دیا

 اسے آہ دامنِ باد نے سر شام ہی سے بجھا دیا

مجھے دفن کرنا تو جس گھڑی تو یہ اس سے کہنا

کہ اے پری وہ جو تیرا عشق زار تھا تہہ خاک اسے دبا دیا

دم غسل سے مرے پیشتر اُسے ہمدموں نے یہ سوچ کر

کہیں جائے اس کا نہ دل ہی دل میں میری لاش پر سے ہٹا دیا

میری آنکھ جھپکی تھی اک پل کل میرے دل نے چاہا کہ اٹھ کر چل

 دل بے قرار نے میاں وہیں چٹکی لے کے جگا دیا

ذرا ان کی شوخی تو دیکھیے لئے لفظ فخر میں میرے پیچھے

 آئے دبے دبے مجھے سانپ کہہ کے ڈرا دیا

میں نے دل دیا میں نے جان دی مگر تو نے نہ قدر کی

کسی بات کو جو کہا کبھی اسے چٹکیوں میں اڑا دیا

بہادر شاہ ظفر

aakhari mughal shahenshah bahadur shah zafar

aakhari mughal shahenshah bahadur shah zafar
By Ghulam Ali Khan (active 1817–55) – Smithsonian, Washington, Public Domain, https://commons.wikimedia.org/w/index.php?curid=19082663

ڈیلرمپل کی کتاب میں ایک برطانوی افسر کا حوالہ دیا گیا ہے جس نے اسے جلاوطنی کے دوران دیکھا تھا:

  “میں نے دیکھا کہ وہ ٹوٹا ہوا بوڑھا آدمی تھا – کسی کمرے میں نہیں ، بلکہ اس کے محل کے ایک دکھی چھول میں – ایک بستر پر پڑا تھا ، جس میں اسے ڈھکنے کے لئے کچھ نہیں تھا لیکن ایک بدبخت بکھرے ہوئے کورلیٹ جب میں نے اس کی طرف دیکھا ، تو اس کی سابقہ ​​عظمت کا ذکر اس کے ذہن میں ابھرا تھا۔ وہ اپنے پلنگ سے مشکل سے اٹھ کھڑا ہوا۔ مجھے اس کے بازو دکھائے جو بیماری اور مکھیوں کے ذریعہ کھائے گئے تھے۔ اور اس نے افسوس کے ساتھ کہا ، کہ اس کے پاس کھانے کے لئے کافی نہیں ہے۔

لیکن ان کے آخری ایام میں بھی ، بہادر شاہ ظفر کی شاعری نے ان کا ساتھ نہیں چھوڑا۔ جلاوطنی کے ایام میں انہوں نے ایک غزل لکھی جس میں ہچکچاتے شاعر بادشاہ کی پریشان تنہائی کا خوبصورتی سے ترجمہ کیا گیا۔

بھری ہے دل میں جو حسرت کہوں تو کس سے کہوں

سنے ہے کون مصیبت کہوں تو کس سے کہوں

 جو تو ہو صاف تو کچھ میں بھی صاف تجھ سے کہوں

ترے ہے دل میں کدورت کہوں تو کس سے کہوں

نہ کوہ کن ہے نہ مجنوں کہ تھے مرے ہمدرد

میں اپنا درد ِمحبت کہوں تو کس سے کہوں

دل اس کو آپ دیا آپ ہی پشیماں ہوں

کہ سچ ہے اپنی ندامت کہوں تو کس سے کہوں

 کہوں میں جس سے اسے ہووے سنتے ہی وحشت

 پھر اپنا قصۂ وحشت کہوں تو کس سے کہوں

 رہا ہے تو ہی تو غم خوار اے دلِ غمگیں

ترے سوا غمِ فرقت کہوں تو کس سے کہوں

جو دوست ہو تو کہوں تجھ سے دوستی کی بات

تجھے تو مجھ سے عداوت کہوں تو کس سے کہوں

 نہ مجھ کو کہنے کی طاقت کہوں تو کیا احوال

 نہ اس کو سننے کی فرصت کہوں تو کس سے کہوں

کسی کو دیکھتا اتنا نہیں حقیقت میں

ظفرؔ میں اپنی حقیقت کہوں تو کس سے کہوں

 ٭٭٭ بہادر شاہ ظفر aakhari mughal shahenshah bahadur shah zafar

read these also ..

dr. Babasaheb Ambedkar QUIZ IN URDU

world homeopathy day in Urdu 10 April Quiz

Leave a Comment

اسکولوں اور والدین کے لیے ہدایات امتحان دینے والوں کے لیے ہدایات ایڈمٹ کارڈ ڈاؤن لوڈ کریں جماعت ششم میں داخلہ نودئے ودیالیہ 2023 -ابھی اپلائی کریں۔ میرا ایڈمٹ کارڈ کیوں نظر نہیں آ رہا ہے؟
%d bloggers like this: